تلونڈی موسیٰ خان کے ابھرتے ہوے ،جوان نسل کے نمائندہ شاعر صابرحسین شاد کی غزل


خلا میں گفتگو کرنے لگے ہیں.
تمہاری آرزو کرنے لگے ہیں.
اگر ملتا، خدا ہے ڈھونڈنے سے
لو ہم بھی جستجو کرنے لگے ہیں
لو اب قبلہ ہمارا ہر طرف ہے
تمہیں ہی چار سو کرنے لگے ہیں.
جنازے میں میرے کچھ دیر کر لو
وہ پیارے اب وضو کرنے لگے ہیں
کہاں اب رنج و غم کہ،پاس آیں
تمہاری گفتگو کرنے لگے ہیں.

3 comments for “تلونڈی موسیٰ خان کے ابھرتے ہوے ،جوان نسل کے نمائندہ شاعر صابرحسین شاد کی غزل

  1. July 13, 2010 at 11:49 pm

    Sabir God bless u.your classmate.amir bhatti gujranwala

  2. July 13, 2010 at 11:50 pm

    Nice poetry

  3. Sabir
    August 17, 2011 at 9:39 am

    Thanks Amir 4 this feed-back …….Sabir

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *